کیا سٹیزن شیپ امندمنٹ بیل بھارت کو ہندو نیشن بنا دیگا ؟

 05 Dec 2019 ( پرویز انور، ڈائریکٹر & ایڈیٹر ان چیف، آئی بی ٹی این گروپ )
POSTER

اے آئی ایم آئی ایم کے رہنما اور لوک سبھا کے رکن پارلیمنٹ اسدالدین اویسی نے کہا ہے کہ شہریت ترمیمی بل ہندوستان کو اسرائیل بنائے گا جو امتیازی سلوک کے لئے جانا جاتا ہے۔

اویسی نے نیوز ایجنسی اے این آئی کو بتایا ، "سٹیزنشپ ترمیمی بل سے پتہ چلتا ہے کہ وہ ہندوستان کو ایک مذہبی ملک بنانا چاہتے ہیں۔ ہندوستان اسرائیل جیسے ممالک کی صف میں آجائے گا جو دنیا کا سب سے امتیازی سلوک والا ملک ہے۔

اویسی نے یہ بھی کہا کہ یہ قانون ہندوستان کے آئین کے آرٹیکل 14 اور 21 کی خلاف ورزی کرتا ہے کیونکہ اس سے مذہب کی بنیاد پر شہریت ختم ہوگی۔

ہندوستان میں بدھ کے روز اس بل کو مرکزی کابینہ نے منظور کرلیا ہے اور امکان ہے کہ اگلے ہفتے اس کو پارلیمنٹ میں پیش کیا جائے گا۔

اس بل میں ہندو ، سکھ ، جین ، بدھ ، پارسی اور عیسائی برادری سے تعلق رکھنے والے افراد ، جو افغانستان ، پاکستان اور بنگلہ دیش سے سیاسی پناہ کے لئے ہندوستان آئے ہیں ، کو ہندوستانی شہریت فراہم کرنے کا بندوبست کیا گیا ہے۔ لیکن مسلم کمیونٹی مہاجرین کو شہریت نہیں دی جائے گی۔

اس بل کی متعدد سیاسی جماعتوں کی مخالفت کی جارہی ہے جن میں ہندوستان کی مرکزی حزب اختلاف کی جماعت کانگریس بھی شامل ہے ، جو ہندوستان کی سپریم کورٹ میں درخواست دے کر اس بل کو روکنے کی کوشش کر سکتی ہے کیونکہ اسے لوک سبھا اور راجیہ سبھا میں آسانی سے منظور کیا جاسکتا ہے۔ ایک امکان موجود ہے۔

ہندوستان کی شمال مشرقی ریاستوں میں اس بل کی سخت مخالفت کی جارہی ہے۔ بی جے پی کی حلیف آسوم گانا پریشد بل کی مخالفت کر رہی ہے۔ شمال مشرق کی ریاستوں کو خوف ہے کہ اس بل کے لاگو ہونے کے بعد ، بنگلہ دیشی ہندو مہاجرین کی آبادی بڑھ جائے گی اور اس کی مقامی آبادی اقلیت بن جائے گی۔

اس بل کو لانے کا فوری مقصد ہندو آبادی (تقریبا 13 لاکھ) کو آسام میں NRC میں شہریت کھونے والے شہریوں کو شہریت دینا ہے۔ لیکن اس بل سے آسام میں NRC میں اپنی شہریت کھو جانے والی مسلم آبادی (تقریبا 5 لاکھ) کو شہریت نہیں دی جائے گی۔ یہ بل مذہبی بنیادوں کے حق میں ہے۔

سیاسی تجزیہ کاروں کا خیال ہے کہ مودی حکومت کے ذریعہ اس بل کو لانے کا اصل مقصد این آر سی لانے کی تیاری ہے۔ تاکہ NRC میں مسلم آبادی اپنی شہریت کھو بیٹھے ، انہیں ہندوستان کی شہریت نہیں مل سکتی ہے۔ لیکن اگر این آر سی میں ہندو ، سکھ ، جین ، بدھ ، پارسی اور عیسائی برادری کے شہری اپنی شہریت کھو دیتے ہیں تو پھر اس بل کی دفعات کے تحت انہیں ہندوستان کی شہریت مل جائے گی۔ مودی سرکار کا یہ اصلی گیم پلان ہے تاکہ ہندوستان کو ہندو قوم بنایا جاسکے۔

 

(Click here for Android APP of IBTN. You can follow us on facebook and Twitter)

Share This News

About sharing

اشتہار

http://www.alshop24.com

 

http://www.alshop24.com

Perwez Anwer Live On IBTN KHABAR


http://www.alshop24.com

http://www.alshop24.com

http://www.alshop24.com

http://www.alshop24.com

http://www.alshop24.com