نریندرا مودی کے دورے کے باد بھی بنگلہ دیش میں تشدد کا سلسلہ جاری ہے

 29 Mar 2021 ( آئی بی ٹی این بیورو )
POSTER

بنگلہ دیش کا برہمنبیریا ہندوستانی وزیر اعظم نریندر مودی کے دورے کے بعد 28 مارچ 2021 ء بروز اتوار تیسرے روز بھی ہنگامہ برپا رہا۔

براہمنبیریا کے مقامی اسپتال کے عہدیداروں نے بتایا کہ 28 مارچ 2021 کو اتوار کو دو اور افراد ہلاک ہوگئے۔

بنگلہ دیش میں گذشتہ تین دن سے جاری پرتشدد مظاہروں میں کم از کم 12 افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔

براہمنبیریا صدر اسپتال کے ڈاکٹر شوکت حسین نے بی بی سی کو بتایا کہ ہڑتال کے دوران جھڑپوں میں زخمی دو افراد کو اسپتال لایا گیا تھا جو دم توڑ گئے۔

ڈاکٹر شوکت حسین نے اس کے علاوہ کوئی اور معلومات فراہم نہیں کی۔

'ہیفاقت اسلام'

مقامی نمائندوں کا کہنا ہے کہ بنیاد پرست اسلامی تنظیم 'ہیفاقت اسلام' کے حامیوں اور سکیورٹی فورسز کے مابین جھڑپیں ہوئی ہیں۔

ان جھڑپوں میں بہت سے افراد زخمی ہوئے ہیں۔

نریندر مودی کے بنگلہ دیش کے دورے کے خلاف متعدد احتجاج کے بعد اتوار 28 مارچ 2021 کو ہڑتال 'ہیفاقت اسلام' نے طلب کی تھی۔

مقامی نمائندے مسواک دل نے بی بی سی کو بتایا کہ اس ہڑتال کے حامیوں نے مختلف سرکاری اداروں پر حملہ کیا ، توڑ پھوڑ کی اور انہیں آگ لگا دی۔

حملہ آوروں نے مبینہ طور پر متعدد سرکاری و نجی عمارتوں کو نذر آتش کیا ، جن میں لینڈ آفس ، پبلک لائبریری اور ڈسٹرکٹ کرافٹس اکیڈمی شامل ہیں۔

مسافر ٹرین پر حملہ

مسواک دل نے مزید بتایا کہ مظاہرین نے مسافر ٹرین پر بھی حملہ کیا ، جس سے متعدد افراد زخمی ہوگئے۔

نیوز ایجنسی رائٹرز نے اطلاع دی ہے کہ اتوار ، 28 مارچ 2021 کو مشرقی بنگلہ دیش میں 'ہیفاقت اسلام' کے سیکڑوں حامیوں نے ہندو مندروں اور ایک ٹرین پر حملہ کیا۔

اس واقعے کے بعد سے براہمنبیریا جانے اور جانے والی ٹرینیں معطل کردی گئیں ہیں۔

بنگلہ دیش میں سب سے زیادہ تشدد برہمنبیریا اور چٹاگانگ میں ہاتازاری میں ہوا ہے۔

ہفتہ ، 27 مارچ ، 2021 کو ، برہمنبیریا میں پولیس اور سکیورٹی فورسز کے ساتھ جھگڑے میں کم سے کم پانچ مظاہرین ہلاک ہوگئے۔

مقامی صحافیوں نے بتایا کہ چھٹا شخص اتوار ، 28 مارچ ، 2021 کو فوت ہوا۔ تاہم ، بی بی سی آزاد ذرائع سے ان دعووں کی تصدیق نہیں کرسکا ہے۔

ہندوستان کے وزیر اعظم نریندر مودی بنگلہ دیش کی آزادی کی 50 ویں سالگرہ کے موقع پر 26 مارچ 2021 بروز جمعہ ڈھاکہ پہنچے۔ کچھ اسلامی تنظیمیں بھی اس کے دورے کی مخالفت کر رہی تھیں۔

 

(Click here for Android APP of IBTN. You can follow us on facebook and Twitter)

Share This News

About sharing

اشتہار

https://www.ibtnkhabar.com/

 

https://www.ibtnkhabar.com/

Al Arabiya


https://www.ibtnkhabar.com/

https://www.ibtnkhabar.com/

https://www.ibtnkhabar.com/

https://www.ibtnkhabar.com/

https://www.ibtnkhabar.com/