امریکا - ترکی رشتہ : امریکا نے ترکی پر پابندی لگائی ، ترکی نے بدلا لینے کی دھمکی دی

 15 Dec 2020 ( آئی بی ٹی این بیورو )
POSTER

امریکہ نے روس میں تعمیر کیے گئے میزائل دفاعی نظام کی تعیناتی کے لئے اپنے نیٹو کی اتحادی ترکی پر پابندی عائد کردی ہے۔ ترکی نے یہ میزائل دفاعی نظام 2019 میں ہی روس سے حاصل کیا تھا۔

امریکہ کا کہنا ہے کہ روس کا زمینی سے فضائی میزائل نظام ایس 400 کسی بھی طرح نیٹو کے تکنیکی پیرامیٹرز پر پورا نہیں اترتا۔ S-400 یورو اٹلانٹک اتحاد کے لئے خطرہ ہے۔

امریکی محکمہ خارجہ نے ان پابندیوں کا اعلان 14 دسمبر 2020 کو کیا جس سے ترکی کی اسلحہ کی خریداری متاثر ہوگی۔

روس اور ترکی کی جانب سے امریکی پابندیوں کے اعلان کے فورا بعد ہی ان پابندیوں کو تنقید کا نشانہ بنایا گیا ہے۔

روس نے پہلے ہی روس میں بنائے گئے میزائل نظاموں کی خریداری کے معاملے پر ترکی کو ایف 35 لڑاکا جیٹ پروگرام سے باہر نکال لیا ہے۔

امریکہ کو کیا اعتراض ہے؟

امریکی وزیر خارجہ مائک پومپیو نے ایک بیان جاری کرتے ہوئے کہا ، "امریکہ نے متعدد مواقع پر ترکی پر واضح کردیا ہے کہ ایس -400 سسٹم کی خریداری سے امریکی فوجی ٹکنالوجی اور فوج خطرے میں پڑ جائے گی۔" اس سے روس کی دفاعی صنعت کو بڑی رقم فراہم ہوگی اور ترکی کی مسلح افواج اور اس کی دفاعی صنعت تک روس کی رسائی میں اضافہ ہوگا۔ ''

مائک پومپیو نے مزید کہا ، "اس کے باوجود ، ترکی نے S-400 سسٹم کی خریداری اور جانچ کے ساتھ آگے بڑھنے کا فیصلہ کیا جب متبادل موجود تھے۔" اس سے ترکی کی دفاعی ضروریات بھی پوری ہوسکتی ہیں۔ ''

انہوں نے کہا ، "میں ترکی سے اپیل کرتا ہوں کہ وہ امریکہ کے ساتھ ایس 400 مسئلہ حل کریں اور اسے فوری طور پر حل کریں۔" ترکی امریکہ کے لئے ایک علاقائی سلامتی کا ایک اہم شراکت دار ہے۔ ترکی کو جلد از جلد ایس -44 سسٹم کی رکاوٹ کو دور کرنا چاہئے اور اپنا عشروں پرانا دفاعی تعاون جاری رکھنا چاہئے۔ '

ڈائریکٹوریٹ آف ڈیفنس انڈسٹریز کے اسماعیل ڈیمر اور تین دیگر ملازمین ترکی پر امریکی پابندی کے تحت آگئے ہیں۔ اس پابندی کے تحت ، امریکہ سے جاری برآمدی لائسنسوں پر پابندی عائد کردی گئی ہے ، اسی طرح امریکی دائرہ اختیار میں ترکی کے اثاثے بھی منجمد کردیئے گئے ہیں۔

ترکی کیا کہتا ہے؟

دوسری طرف ، ترکی کی وزارت خارجہ نے "امریکہ سے اپیل کی ہے کہ وہ اپنے حامی فیصلے پر نظر ثانی کرے"۔

ترکی نے یہ بھی کہا ہے کہ وہ اتحاد کی روح کے مطابق سفارتی گفت و شنید کے ذریعہ اس مسئلے کا حل تلاش کرنے کے لئے تیار ہے۔

ترکی کی وزارت خارجہ کی طرف سے جاری کردہ بیان میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ "امریکی پابندی سے ہمارے تعلقات پر منفی اثرات مرتب ہوں گے" اور ترکی اس کا بدلہ مناسب طور پر لے گا۔

ترکی کا کہنا ہے کہ امریکہ نے اسے پیٹریاٹ میزائل فروخت کرنے سے انکار کردیا تھا ، جس کے بعد اس نے روس سے ایس 400 نظام خرید لیا تھا۔

ترک حکام کا یہ بھی کہنا ہے کہ نیٹو کا دوسرا شراکت دار یونان کا اپنا ایس -300 نظام ہے ، حالانکہ اس نے اسے براہ راست روس سے نہیں خریدا ہے۔

روس کے وزیر خارجہ سرگئی لاوروف نے امریکی پابندی پر تنقید کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس سے "بین الاقوامی قانون کے خلاف معاندانہ رویہ" کی عکاسی ہوتی ہے۔

سرگئی لاوروف نے کہا کہ امریکہ اس طرح کے یکطرفہ اور غیر قانونی جابرانہ اقدامات کر رہا ہے۔

ترکی کتنا اہم ہے؟

ترکی کے پاس تیس ممالک کا فوجی اتحاد ، نیٹو میں دوسری بڑی فوج ہے۔

وہ امریکہ کا ایک اہم پارٹنر ہے اور شام ، عراق اور ایران کی سرحد کی وجہ سے اسٹرٹیجک اہمیت رکھتا ہے۔

شام نے تنازعہ میں ترکی نے بھی اہم کردار ادا کیا ہے۔ اس نے شام کے کچھ باغی گروپوں کو فوجی اور ہتھیاروں کی مدد فراہم کی ہے۔

تاہم ، حالیہ دنوں میں نیٹو اور یورپی یونین کے کچھ ممبر ممالک کے ساتھ ترکی کے تعلقات خراب ہوئے ہیں۔ ان ممالک کا الزام ہے کہ ترک صدر ریشپ طیب اردوان سن 2016 کے ناکام بغاوت کے بعد من مانی انداز میں کام کر رہے ہیں۔

ایس 400 کام کیسے کرتا ہے؟

طویل فاصلے پر نگرانی کرنے کے قابل ایک راڈار اشیاء کی نگرانی کرتا ہے اور اپنی معلومات کمانڈ گاڑی کو بھیجتا ہے جہاں ممکنہ ہدف کا اندازہ لگایا جاتا ہے۔

ہدف کی شناخت کے بعد ، کمانڈ گاڑی میزائل لانچ کرنے کا حکم دیتی ہے۔

اس سے منسلک ڈیٹا لانچ گاڑی پر بھیجا جاتا ہے اور وہاں سے زمین سے ہوا تک مار کرنے والا میزائل فائر کیا جاتا ہے۔

راڈار میزائل کو اپنے ہدف تک پہنچنے میں مدد کرتا ہے۔

 

(Click here for Android APP of IBTN. You can follow us on facebook and Twitter)

Share This News

About sharing

اشتہار

https://www.ibtnkhabar.com/

 

https://www.ibtnkhabar.com/

Al Arabiya


https://www.ibtnkhabar.com/

https://www.ibtnkhabar.com/

https://www.ibtnkhabar.com/

https://www.ibtnkhabar.com/

https://www.ibtnkhabar.com/