سپریم کورٹ میں آکسیجن پر کوئی رپورٹ پیش نہیں ہی : منش سیسوڈیا

 25 Jun 2021 ( آئی بی ٹی این بیورو )
POSTER

ہندوستانی میڈیا میں ایسی اطلاعات ہیں کہ ہندوستان کی سپریم کورٹ کے ذریعہ قائم کردہ 'آکسیجن آڈٹ کمیٹی' نے اپنی رپورٹ میں دعوی کیا ہے کہ 'کیجریوال حکومت نے کورونا وبا کی دوسری لہر کے دوران چار گنا زیادہ آکسیجن کا مطالبہ کیا'۔

لیکن عام آدمی پارٹی نے اس طرح کی ایک رپورٹ کے وجود پر سوالیہ نشان لگا دیا ہے۔

اخبارات میں شائع ہونے والی خبر کے مطابق ، دلی حکومت کو دراصل تقریبا  289 میٹرک ٹن آکسیجن کی ضرورت تھی ، لیکن ان کے ذریعہ تقریبا 1200 میٹرک ٹن آکسیجن کا مطالبہ کیا گیا تھا۔

عام آدمی پارٹی سے وابستہ افراد کا کہنا ہے کہ یہ رپورٹ سپریم کورٹ پینل کی نہیں ہے ، بلکہ ایک ذیلی پینل کی ہے جو مرکزی پینل کو بھجوا دی گئی ہے اور یہ سب پینل دراصل مرکز میں نریندر مودی حکومت کی ہے۔ اہم بات یہ ہے کہ مرکز میں بی جے پی کی حکومت ہے۔

عام آدمی پارٹی کا جواب

عام آدمی پارٹی نے اس خبر کی سختی سے تردید کی ہے۔ عام آدمی پارٹی کے رہنما اور دہلی کے نائب وزیر اعلی منیش سسوڈیا نے میڈیا کو بتایا کہ ایسی کوئی رپورٹ نہیں ہے۔

منیش سسوڈیا نے کہا ، "سچائی یہ ہے کہ ایسی کوئی رپورٹ نہیں ہے۔ بی جے پی جھوٹ بول رہی ہے۔ سپریم کورٹ نے آکسیجن آڈٹ کمیٹی تشکیل دی ہے۔ ہم نے بہت سے ممبروں سے بات کی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ انہوں نے ابھی تک اس رپورٹ پر دستخط نہیں کیے ہیں۔ اگر رپورٹ منظور نہیں ہوئی تو پھر یہ رپورٹ کہاں ہے؟ میں آپ کو چیلنج کرتا ہوں کہ وہ رپورٹ لائیں جو منظور ہوچکی ہے۔ جھوٹ بہت زیادہ ہے۔ "

میڈیا میں آنے والی اطلاعات میں کہا گیا ہے کہ کیجریوال حکومت کی ضرورت سے زیادہ مانگ کا اثر 12 ریاستوں میں دیکھا گیا جہاں آکسیجن کی کمی کی وجہ سے بہت سارے مریض اپنی زندگی سے ہاتھ دھو بیٹھے۔

ہندوستان میں کورونا وبا کی دوسری لہر کے دوران آکسیجن کی شدید قلت تھی۔ کئی بار ایسی اطلاعات آئیں کہ آکسیجن کی کمی کی وجہ سے بہت سارے مریضوں کی راتوں رات موت ہوگئی۔

اس وقت ، کیجریوال حکومت نے مرکزی حکومت سے آکسیجن کا مطالبہ کیا تھا۔

اس مبینہ رپورٹ کی بنیاد پر ، بھارتیہ جنتا پارٹی کے بہت سے رہنما اب دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال کا محاصرہ کر رہے ہیں۔

 

(Click here for Android APP of IBTN. You can follow us on facebook and Twitter)

Share This News

About sharing

اشتہار

https://www.ibtnkhabar.com/

 

https://www.ibtnkhabar.com/

Al Arabiya


https://www.ibtnkhabar.com/

https://www.ibtnkhabar.com/

https://www.ibtnkhabar.com/

https://www.ibtnkhabar.com/

https://www.ibtnkhabar.com/