کیا بھارت اکنامک مندی کی طرف بدھ رہا ہے ؟

 30 Aug 2019 ( آئی بی ٹی این بیورو )
POSTER

ہندوستان کی مجموعی گھریلو مصنوعات یعنی مالی سال 2019 201920 کی پہلی سہ ماہی میں جی ڈی پی پچھلے سال کے اسی عرصے سے کمزور رہی ہے۔

2019۔20 کی پہلی سہ ماہی کا ڈیٹا جاری کردیا گیا ہے۔ جس کے مطابق معاشی نمو کی شرح 5٪ ہے۔ گذشتہ مالی سال کی اسی سہ ماہی کے دوران شرح نمو 8 فیصد تھی۔

اسی دوران ، گذشتہ مالی سال کی آخری سہ ماہی میں شرح نمو 5.8 فیصد تھی۔

ماہر معاشیات وویک کول کے مطابق ، گذشتہ 25 سہ ماہیوں میں یہ سہ ماہی میں سہ ماہی میں نمو تھی اور مودی حکومت کے دوران یہ سب سے کم تھی۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ ملکی معیشت میں ترقی کی رفتار کم ہوتی جارہی ہے۔ یہ پچھلے تین سالوں سے ہورہا ہے۔

ان کا کہنا ہے کہ صنعتوں کے بہت سے شعبوں میں نمو کی شرح کئی سالوں میں نچلی سطح تک پہنچ گئی ہے۔ ملک کساد بازاری کی طرف گامزن ہے۔

دوسری سہ ماہی میں ہندوستانی معیشت سست رفتار سے بڑھی۔ تو ، مسلسل دوسری سہ ماہی میں معیشت کی شرح نمو میں سست روی کے ساتھ ، کیا ہمیں یہ فرض کرنا چاہئے کہ ہم معاشی کساد بازاری کی طرف گامزن ہیں؟

معاشی امور کے ماہر ممبئی سے تعلق رکھنے والے ویویک کال کا کہنا ہے کہ ہندوستان کی معیشت کی شرح نمو میں سست روی آئی ہے ، لیکن اس کو کساد بازاری نہیں کہا جائے گا۔ ان کا کہنا ہے ، "سست روی کا مطلب ہے مسلسل دو چوتھائی تک منفی نمو۔ ہندوستان کی معیشت سست ہوگئی ہے لیکن منفی نمو نہیں ہو سکتی۔"

NITI Aayog کے ڈپٹی چیئرمین راجیو کمار کے مطابق ، جون میں ختم ہونے والے سال کی پہلی سہ ماہی میں شرح نمو میں کمی کا مطلب یہ نہیں ہونا چاہئے کہ ملک کی معیشت کساد بازاری کا شکار ہوگئی ہے۔

ان کا کہنا ہے ، "ہندوستان میں سست ترقی کی بہت سی وجوہات ہیں جن میں دنیا کی تمام معیشتوں میں سست روی ایک بڑی وجہ ہے۔"

راجیو کمار کا کہنا ہے کہ ہندوستان کی معیشت کے بنیادی اصول مضبوط ہیں۔ وہ کہتے ہیں ، "وزیر خزانہ نے گذشتہ ہفتے متعدد اقدامات کا اعلان کیا جس سے سرمایہ کاروں اور صارفین کے مزاج پر مثبت اثرات مرتب ہوں گے۔ ہم تہوار کے موسم میں داخل ہورہے ہیں اور ہمیں امید ہے کہ دوسری سہ ماہی تک ترقی کی شرح دیکھنے کو ملے گی۔ ''

کساد بازاری کی تعریف کیا ہے؟ یہ ایک کانٹا والا سوال ہے جس پر ماہرین اب بھی مکمل طور پر متفق نہیں ہیں۔

تکنیکی لحاظ سے ، ہندوستان کی معیشت میں مسلسل دوسری سہ ماہی میں ترقی ہوئی ہے ، یعنی ، ترقی کی دوڑ میں مسلسل چھ ماہ تک کمی واقع ہوئی ہے ، لیکن اگر اس مالیاتی سال کے اگلے تین سہ ماہیوں میں شرح نمو میں اضافہ ہوتا ہے تو اسے کساد بازاری نہیں کہا جائے گا۔

کیا کساد بازاری کی مختلف قسمیں ہیں؟ مکمل طور پر معیشت مسلسل دو چوتھائیوں تک سکڑ سکتی ہے ، لیکن پھر مالی سال کے اگلے دو حلقوں میں صحت یاب ہوجائے گی ، تب واقعی پورے سال میں ترقی میں اضافہ ہوگا۔

مغربی ممالک میں ، اسے ہلکی کساد بازاری کہا جاتا ہے۔ اگر سال بہ سال بنیادوں پر معاشی نمو میں مکمل کمی واقع ہو تو ، اسے ایک شدید کساد بازاری کہا جاسکتا ہے۔

اس سے افسردگی بھی ہوتی ہے ، یعنی برسوں تک منفی نشوونما۔

امریکی معیشت کا سب سے بڑا بحران 1930 کی دہائی میں آیا ، جسے آج افسردگی کے طور پر یاد کیا جاتا ہے۔ افسردگی میں افراط زر ، بے روزگاری اور غربت عروج پر ہے۔

معاشی ماہرین کا کہنا ہے کہ معیشت نفسیاتی دباؤ کا شکار بھی ہوسکتی ہے۔

ویویک کال کے مطابق ، اگر صارف ہوشیار ہو جائے اور خریداری ملتوی کردی ، تو اس سے طلب میں کمی آئے گی ، جس کی وجہ سے معاشی نمو کی شرح کم ہوسکتی ہے۔ اگر مہنگائی میں اضافہ ہونا شروع ہو اور غیر یقینی صورتحال کی فضا ہو ، تو لوگوں کو محسوس ہوتا ہے کہ وہ کساد بازاری کی زندگی گزار رہے ہیں۔

ہندوستان میں کساد بازاری کا آغاز ہوا؟ ہندوستانی معیشت کا سب سے بڑا بحران 1991 میں اس وقت آیا جب درآمدات کے لئے ملک کا زرمبادلہ ذخائر گھٹ کر 28 ارب ڈالر رہ گیا تھا۔ آج یہ رقم 491 ارب ڈالر ہے۔

2008-09 میں عالمی کساد بازاری کا عالم تھا۔ اس وقت ہندوستان کی معیشت میں 3.1 فیصد کی شرح سے ترقی ہوئی تھی جو اس کے پہلے سالوں کے مقابلے میں کم تھی لیکن ویویک کال کے مطابق اس وقت بھی ہندوستان کساد بازاری کا شکار نہیں تھا۔

 

(Click here for Android APP of IBTN. You can follow us on facebook and Twitter)

Share This News

About sharing

اشتہار

http://www.alshop24.com

 

http://www.alshop24.com

Perwez Anwer Live On IBTN KHABAR


http://www.alshop24.com

http://www.alshop24.com

http://www.alshop24.com

http://www.alshop24.com

http://www.alshop24.com