کیا بھارت بائیوٹیک کی ویکسین کورونا وائرس سے بچاؤ کر سکتی ہے ؟

 05 Dec 2020 ( پرویز انور، ایم دی & سی یی ؤ ، آئی بی ٹی این گروپ )
POSTER

بھارت میں کوواکسن نامی کورونا ویکسین تیار کرنے والی کمپنی بھارت بائیوٹیک نے کہا ہے کہ اس ویکسین کے کلینیکل ٹرائل کے دوران ، 28 دن کے بعد اس شخص کو دو خوراکیں دی جاتی ہیں یعنی تقریبا about ایک ماہ کے وقفے پر۔

خبر رساں ادارے اے این آئی کے مطابق ، کمپنی نے کہا ہے کہ ویکسین کے اثر کا پتہ لگانے کے بعد وہ دوسری خوراک کے 14 دن بعد ہی معلوم کرسکتی ہے۔ یہ ویکسین اس طرح تیار کی گئی ہے کہ جو ان کی دو خوراکیں لیتے ہیں ان پر یہ کارآمد ہے۔

ویکسین کے فیز III کے کلینیکل ٹرائل کے بارے میں ، کمپنی نے کہا کہ فیز III ٹرائل میں شامل 50٪ لوگوں کو یہ ویکسین دی جاتی ہے جبکہ باقی 50٪ کو پلیسبو دیا جاتا ہے۔

پلیسبو ایک خاص قسم کی دوائی ہے جس کا جسم پر کوئی اثر نہیں ہوتا ہے۔ ڈاکٹر یہ جاننے کے ل use ڈاکٹروں کا استعمال کرتے ہیں کہ کسی شخص کو دوائی لینے پر کتنا اور کیا ذہنی اثر پڑتا ہے۔

اس سے پہلے ہریانہ حکومت میں ، کابینہ کے وزیر انیل وج نے اپنے کورونا ٹیسٹ مثبت آنے کے بارے میں بتایا تھا۔

20 نومبر 2020 کو ، اس نے کووکسین ویکسین حاصل کرکے ویکسین کے ٹرائل کے تیسرے مرحلے کا آغاز کیا۔

ہندوستان کے ایک صوبے ہریانہ کے وزیر صحت نے 20 نومبر 2020 کو کورونا وائرس سے بچاؤ کے لئے ٹیکہ لگایا تھا۔ وزیر صحت کو قطرے پلائے جانے کے باوجود کورونا وائرس سے متاثر ہوگیا ہے۔

ہریانہ حکومت میں کابینہ کے وزیر صحت انیل وج کا کورونا ٹیسٹ مثبت ہے۔ انیل وج نے ٹویٹر پر یہ اطلاع دی۔

انہوں نے ٹویٹر پر لکھا ، "میرا کورونا ٹیسٹ مثبت آیا ہے۔ میں سول اسپتال ، امبالا کینٹ میں داخل ہوں۔ وہ لوگ جو ماضی میں میرے ساتھ رابطے میں آئے تھے انھیں اپنی کورونا چیک کروانے کا مشورہ دیا جاتا ہے۔

اس سے قبل ، 20 نومبر 2020 کو ، اس نے امبالا کے ایک اسپتال میں کووکسین ویکسین لگوا کر ویکسین ٹرائل کے تیسرے مرحلے کا آغاز کیا۔

 

(Click here for Android APP of IBTN. You can follow us on facebook and Twitter)

Share This News

About sharing

اشتہار

https://www.ibtnkhabar.com/

 

https://www.ibtnkhabar.com/

Al Arabiya


https://www.ibtnkhabar.com/

https://www.ibtnkhabar.com/

https://www.ibtnkhabar.com/

https://www.ibtnkhabar.com/

https://www.ibtnkhabar.com/