کیا فیس بوک نے در سے بجرنگ دل کو خطرناک ماننے سے انکار کیا ؟

 15 Dec 2020 ( آئی بی ٹی این بیورو )
POSTER

ہندوستان سے شائع ہونے والے ایک انگریزی اخبار ٹائمز آف انڈیا کی ایک خبر کے مطابق ، فیس بک انڈیا نے بجرنگ دل کو ایک خطرناک تنظیم سمجھنے سے انکار کردیا کیونکہ وہ اپنے ملازمین پر حملہ کرسکتا ہے اور اس کے کاروبار کو متاثر کرسکتا ہے۔

ٹائمز آف انڈیا نے یہ خبر امریکی اخبار وال اسٹریٹ جرنل کی ایک رپورٹ کے حوالے سے لکھی ہے۔

اس رپورٹ کے مطابق ، بجرنگ دل کو ایک خطرناک تنظیم میں شامل کرنے کا مطالبہ جون 2020 میں دہلی کے باہر چرچ پر حملے کے بعد سے پیدا ہوا تھا۔

بجرنگ دل کے ممبروں نے اس کی ذمہ داری قبول کی۔ حملہ آوروں نے دعوی کیا کہ چرچ ہندو مندر کی جگہ پر بنایا گیا تھا۔

اخبار کے مطابق ، رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ فیس بک نے سناتن سنستھا اور شری رام سینا پر پابندی کے خطرے کا بھی ذکر کیا ہے۔

فیس بک کی سیفٹی ٹیم 2020 کے اوائل میں اس نتیجے پر پہنچی کہ بجرنگ دل پورے ہندوستان میں اقلیتوں کے خلاف تشدد کی حمایت کرتی ہے اور اسے ایک خطرناک تنظیم سمجھا جاسکتا ہے۔ تاہم ، فیس بک انڈیا نے اس مشورے کو مسترد کردیا۔

اخبار کے مطابق وال اسٹریٹ جنرل نے فیس بک کے ترجمان اینڈی اسٹون کے حوالے سے بتایا ہے کہ بجرنگ دل کی وجہ سے ان کے ملازمین اور کاروبار مشکل ہوسکتے ہیں اور اس پر تبادلہ خیال ہوا۔ یہ معیاری عمل کا ایک حصہ تھا۔

کانگریس کے سابق صدر راہل گاندھی نے ایک نیوز چینل کی ویڈیو کلپ شیئر کی ہے جس میں وال اسٹریٹ جرنل کی رپورٹ دکھائی گئی ہے۔ راہول گاندھی نے لکھا ، "ہندوستان میں فیس بک کو کنٹرول کرنے والی بی جے پی-آر ایس ایس کی ایک اور تصدیق"۔

اسی کے ساتھ ہی فیس بک نے کسی بھی سیاسی جماعت کی طرفداری کی تردید کی ہے۔ فیس بک کے ترجمان نے ٹائمز آف انڈیا کو بتایا ، "ہم خطرناک تنظیموں اور افراد کی اپنی پالیسی کو بغیر کسی سیاسی یا پارٹی وابستگی کے نافذ کرتے ہیں۔"

وشو ہندو پریشد نے ٹائمز آف انڈیا کو بتایا ہے کہ یہ تنظیم وال اسٹریٹ جرنل کی بدنامی کے لئے قانونی کارروائی کرے گی۔ بجرنگ دل اور وشوا ہندو پریشد آر ایس ایس کے خاندان کا حصہ ہیں۔

 

(Click here for Android APP of IBTN. You can follow us on facebook and Twitter)

Share This News

About sharing

اشتہار

https://www.ibtnkhabar.com/

 

https://www.ibtnkhabar.com/

Al Arabiya


https://www.ibtnkhabar.com/

https://www.ibtnkhabar.com/

https://www.ibtnkhabar.com/

https://www.ibtnkhabar.com/

https://www.ibtnkhabar.com/