بنگال میں بی جے پی جیتی تو شیخ حسینا کے لیے مشکلیں بدھنگی

 28 Mar 2021 ( آئی بی ٹی این بیورو )
POSTER

ڈھاکہ ٹریبون نے نئی دہلی میں واقع انسٹی ٹیوٹ آف سوشل سائنسز کے سینئر فیلو پارٹھا ایس گھوش کا ایک تناظر مضمون شائع کیا ہے۔ اس مضمون میں کہا گیا ہے کہ اگر بی جے پی مغربی بنگال میں جیت جاتی ہے تو ، شیخ حسینہ کے لئے سیاسی چیلنج کئی گنا بڑھ جائیں گے۔

اس مضمون میں کہا گیا ہے کہ نریندر مودی کا 'ہندوتوا' اور شیخ حسینہ کا 'سیکولرازم' بنیادی طور پر مخالف ہے۔

مضمون کے مطابق ، 27 مارچ 2021 کو شروع ہونے والے مغربی بنگال اسمبلی انتخابات کے لئے بی جے پی کے اسٹار مہمندگان پی ایم نریندر مودی ہندو مسلم تقسیم کی بات کررہے ہیں ، جو مغربی بنگال کی سیاست میں پہلے کبھی نہیں دیکھا گیا تھا۔

اس میں لکھا ہے ، "مودی کی زیرقیادت بی جے پی کے 2014 میں اقتدار میں آنے کے بعد ہندوتوا نے بنگال کی سیاست میں قدم رکھا تھا۔ حال ہی میں ، بی جے پی نے بنگال کی سیاست میں مضبوط موجودگی درج کی اور 2019 کے لوک سبھا انتخابات میں 42 میں سے 18 نشستیں حاصل کیں۔ '

اس مضمون میں کہا گیا ہے کہ ہندوستان کے پڑوسی ملک بنگلہ دیش کو مغربی بنگال کے آٹھ مراحل کی ووٹنگ اور پھر 2 مئی 2021 کے نتائج کے بارے میں سوچنا ہوگا۔

پرتھا ایس گھوش نے مضمون میں یاد دلایا کہ بنگال امن کی علامت رہا جب تقسیم ہند کے بعد ہندوستان کے دوسرے حصے فسادات سے لڑ رہے تھے۔

وہ لکھتے ہیں ، "شیخ حسینہ اور نریندر مودی کے لئے واضح طور پر مواقع موجود ہیں ، لیکن اگر ہم گہرائی میں جائیں تو ، شدید تضادات سامنے آتے ہیں۔ بنگلہ دیش بھارت سے خوش ہے کیونکہ اس سے مالی فائدہ ہو رہا ہے۔ ہندوستان کے ساتھ اس کی برآمدات میں 300 فیصد اضافہ ریکارڈ کیا گیا ہے۔ ہندوستان بھی خوش ہے کیونکہ بنگلہ دیش شمال مشرقی عسکریت پسندوں کو اپنی سرزمین کو استعمال کرنے سے روک رہا ہے لیکن ان سنگم کے مقامات سے آگے ایک وسیع اور خطرناک سمندر ہے۔ '

پرتھا ایس گھوش لکھتے ہیں ، "اگر بی جے پی نے مغربی بنگال میں اقتدار حاصل کرلیا تو حسینہ کے لئے سیاسی چیلنج کئی گنا بڑھ جائیں گے۔" حسینہ مودی کے مشترکہ بیان میں اچھی چیزوں کو تھوڑی اہمیت نہیں دی جائے گی۔ '

پرتھا ایس گھوش لکھتے ہیں ، "تعلقات خراب ہوسکتے ہیں کیونکہ نہ تو نریندر مودی اور نہ ہی امت شاہ جنوبی ایشیاء کی علاقائی ذہنیت کو سمجھتے ہیں۔ اس کے نزدیک خارجہ پالیسی ایک طرح سے گھریلو سیاست ہے۔ گھریلو سیاست کیسی ہوتی ہے یہ ہم سب جانتے ہیں۔

 

(Click here for Android APP of IBTN. You can follow us on facebook and Twitter)

Share This News

About sharing

اشتہار

https://www.ibtnkhabar.com/

 

https://www.ibtnkhabar.com/

Al Arabiya


https://www.ibtnkhabar.com/

https://www.ibtnkhabar.com/

https://www.ibtnkhabar.com/

https://www.ibtnkhabar.com/

https://www.ibtnkhabar.com/